جب عید پر اُمید ٹوٹے گی

Click here to View Printed Statements

اُمید کی جب موت ہوتی ہے تو وہ حسرت کا روپ دھار لیتی ہے۔پاکستان کے متوسط طبقہ کی اُمیدیں روز ٹوٹتی ہیں اور یوں سفید پوشوں کے اس کنبے کے دامن میں حسرتوں کی لاشیں اوپر نیچے ڈھیر ہوتی رہتی ہیں۔پٹرول ‘ڈیزل کی قیمتیںبڑھیں‘اپوزیشن نے بھڑکیں ماریں ڈیسک بجائے گئے لیکن پھر ایک مجرمانہ خاموشی چھا گئی۔ چھوٹو پہلے دس پندرہ روپے دے کر ورکشاپ پہنچ جاتا تھا اب ویگنوں کے کرائے بڑھ گئے ہیں وہ سائیکل لے نہیںسکتا‘عام سا سائیکل بھی اب ساڑھے چھ ہزار روپے میںملتا ہے۔

Continue reading »

Posted by AAMIR JAVED / 16 Nov 10

کیوں آئی مشرف کی یاد

Click here to View Printed Statement

سابق صدر جنرل (ر) پرویز مشرف کے آٹھ سالہ دور حکومت میںپاکستانی عوام نے جدید روشن خیالی کے نام پر بہت سے ذہنی اور روحانی تازیانے برداشت کئے- اس دور کے سات نکاتی ایجنڈے نے بہت سی امیدیں پیدا کردی تھیں اور بڑے بڑے کرپٹ لوگ ”نیب“ کے ذریعے شکنجے میں کسے بھی گئے ۔پھر یوں ہوا کہ سدا بہار سیاسی نوسربازوں نے چیف ایگزیکٹو کے گرد گھیرا تنگ کرنا شروع کردیا اور چاپلوسی‘ ترغیب حرص وہوس کا ایسا شکنجہ کسا گیا کہ نہ کالا باغ ڈیم بن سکا‘نہ کشمیر مل سکا اور نہ ہی شفاف سیاسی کلچر نصیب ہوسکا۔کوئی جائز وجہ نہیں کہ مشرف کی یادآئے ‘لیکن پھر بھی مشرف کی یادکیوں آتی ہے؟

Continue reading »

Posted by AAMIR JAVED / 13 Nov 10

کرپشن کےچاچے اور مامے

Click here to View Printed Statement

اسّی اور نوے کی دہائی میں اردو اخبارات نے مالی بدعنوانی کی جگہ سمندر پار کی طرف سے دی گئی اصطلاع ”کرپشن“ کو شہ سرخیوں میں اس وقت جگہ دینا شروع کی جب میاںنوازشریف اور بے نظیر بھٹو کی حکومتوںکو کرپشن کے الزامات لگا کر ختم کیاگیا۔ تب سے ذرائع ابلاغ اور ان سے متاثر ہونے والے ناظرین اور قارئین لفظ ”کرپشن“ سے متواتر متعارف ہو رہے ہیں بلکہ اب تو شائد ہم روزمرہ کے معمولات میںبھی کئی بار”کرپشن“ اور ”کرپٹ“ کے الفاظ استعمال کرتے رہتے ہیں۔

Continue reading »

Posted by AAMIR JAVED / 01 Nov 10

Content on this page requires a newer version of Adobe Flash Player.

Get Adobe Flash player