تعمیر پاکستان بذریعہ نظریاتی تعلیم

Click here to View Printed Statement

زرداری اور مشرف دور میں مملکت پاکستان کو سیاسی طور پر ہی نہیں نظریاتی طور پر بھی فکری انتشار کی دلدل میںدھکیل دیا گیا تھا۔ آج بھی ہمارے تعلیمی نصاب میں ہمارے نظریاتی محاذ پر شخصی شب خون کے آثار پوری طرح نمایاں ہیں۔ امید رکھنی چاہیے کہ تعلیم جیسے اہم ترین شعبے میںاہل’اور درد دل رکھنے والے وزیر جناب بلیغ الرحمن پہلی کلاس سے لے کر اعلیٰ تعلیمی نصاب تک جابجا پھیلی ہوئی فکرو نظر کی تباہ کن بارودی مائنز کو صاف کرکے دل و دماغ کے لئے خالص اسلامی اورپاکستانی غذا فراہم کرنے کا سبب پیدا کرسکیں گے۔ آج جس قدر تعلیمی نصاب کی اصلاح ضروری ہے شائد ہی کسی اورشعبے میں ایسی ایمرجنسی تقاضا کرتی ہو۔

Continue reading »

Posted by AAMIR JAVED / 09 Apr 14

نظریہ پاکستان اور جدید نظام تعلیم

Click here to View Printed Statement

گو کہ اردو ہماری قومی زبان ہے اور ہمیں اس کو بولنے میں ہچکچانا نہیں چاہئے لیکن انگریزی اب سائنس اور ٹیکنالوجی کی زبان کی حیثیت اختیار کرچکی ہے۔ اگر ہم اپنی آنے والی نسلوں کوبین الاقوامی معیار کی تعلیم دینا چاہتے ہیں تو ہمیں ہر حال میں انگلش میڈیم کو اپنانا ہوگا ۔
انگریزی نظام تعلیم کا ہرگز مطلب نہیں کہ انگلش پڑھنے والے بچے اسلامی تہذیب اور مشرقی طرز حیات سے دور ہٹا دیئے جائیں۔ افسوس کہ ایک گروہ نے انگلش میڈیم سکولوں کے نام پر مغربیت کو اپنا کلچر بنا دیا ہے ۔ ہماری آنے والی نسلیں تعلیم تو حاصل کر رہی ہیں لیکن تربیت سے محروم ہوتی جارہی ہیں مغربی طرز حیات ان کی فکرو نظر میں سما گیا ہے اور ہمارا بچہ انگریزی پڑھ کر ایک اچھا مسلمان انجینئر ‘ڈاکٹر’ بینکار اورمنتظم بننے کے بجائے وہ یورپی دنیا کے لئے کار آمد پرزہ بن رہا ہے ۔میں نے معاشرتی انحطاط کا بغور جائزہ لیا اور اس نتیجہ پر پہنچا ہوں کہ ہماری نسل کو جہاں بیکن ہائوس ‘ روٹس’ سٹی اور فروبلز جیسے سکولوں کامعیار تعلیم درکار ہے وہیں ان کے اندر اسلام اور پاکستان سے محبت کو فروغ دینا وقت کی انتہائی ضرورت بن گیا ہے۔وطن عزیز کے مستقبل پر گہری نظر رکھنے والے اہل علم کو چاہیے کہ وہ جدید طرز کے سکول سسٹم کا اجراء کریں جس کا مقصد انگریزی تعلیم اور اسلامی تربیت کا ایک حسین امتزاج پیدا کرنا ہو۔ اس نظم کے تحت جاری مدرسہ دراصل ایک سکول ہی نہیں بلکہ معاشرے میں موجود مغربیت پسند اور اسلام پسندوں طبقوں میں ربط بڑھانے کی ایک تحریک بھی ہوگی۔ یہ ایک ایسا System of Education ہو جو اپنے زیر تعلیم بچوں کو پکا پاکستانی اور باعمل مسلمان بنائے اور اس کے ساتھ ساتھ جدید ترین طریقہ تدریس کے ذریعہ نارمل ذہانت رکھنے والے طالب علموں کو بھی جدید زندگی کی دوڑ میں دوڑنے کے قابل بنائے ۔ پسماندہ علاقے کے ذہین بچوں کو مہنگے ترین سکولوں میں تعلیم حاصل کرنے والے سٹوڈنٹس کے مقابل لا کر کھڑاکر دے ۔

Continue reading »

Posted by AAMIR JAVED / 07 Apr 14

Content on this page requires a newer version of Adobe Flash Player.

Get Adobe Flash player